Khalil-Ur-Rehman Explains Concept Of Mere Paas Tum Ho

The star-studded drama serial Mere Paas Tum Ho has been the talk of the town. The writer Khalil-ur-Rehman in an interview explained the concept behind the story of Mere Paas Tum Ho.

Khalil-Ur-Rehman Explains Concept Of Mere Paas Tum HoHe talked about how he got to know about feminism a few years ago and he realized it was cancer for the society and he needs to do something to show that men are innocent creatures.

“Around eight years ago I got to know there is something like feminism and I knew its dangerous. There are 35-36 women who are trying to capture women through their ulterior motives,” Qamar said.

Khalil-Ur-Rehman Explains Concept Of Mere Paas Tum Ho

He further added, “We have our own religious and social norms and by reading a few books you (feminists) are challenging religious and social norms. Nobody will allow them to do this.”

He criticized the famous slogan Mera Jism Meri Marzi and said, “What is this? If you believe in this then go back to ancient times where women who believed in this were used to capture in bazaar-e-husn. You are ruining our society by abusing men.”

Khalil-Ur-Rehman Explains Concept Of Mere Paas Tum Ho

He explained how men respect women. “In every drama, every man is shown beating woman, man is being abused, are they crazy?  Since the day man is born, he cares for a woman. He advocated how men suffer in his whole life, respect his mothers, sisters, wife, and daughter.”

ہاتھ چوم لیں تیرے خلیل الرحمان قمر ۔پرخچے اڑا دئیے میرا جسم میری مرضی والوں کے۔سلام سر🙆‍♂️🙋‍♂️

Gepostet von Nooran Shah am Mittwoch, 22. Januar 2020

Khalil-ur-Rehman Qamar has serious issues with women and seems like he will not stop showing women in evil roles in the future as well. What do you think about his statement? Share with us in the comments section below.

Safina

Safina Jatoi is a content creator and editor at Reviewit. She loves to explore latest themes related to Pakistani Showbiz and Latest Happenings.

  • his concept is how to make more money & not care about the viewers that made his drama where it today by watching it

  • His drama’s are hard core.
    People can think what they like
    And people can say what they please….

    But the honest truth is….. The miserable world is full of disgusting and filthy shit.

    We the people are in a simple denial.

    He’s producing raw stuff.

    And I don’t see a problem.

    And I don’t think people see/watch enough forgein movies.

  • Khalil sab pay criticise krny waly ya bataiy.kia hamri society mai aisi ortaiy nahi hai??Kia khalil sab pahly writer hai Jinho ny orat ko negative dekhya hy??to phir maat dramaiy mai umera Ahmad ny kia dekhya tha.ya kahi nahi lekha ky mard ghunah karaiy to sar e bazar tamsha bana do.or orat ko dar pardah ghunah ki ejazat dy do.phir to orat ki azadi waly us ki azadi k laiy barbadi ky laiy awaz utha rahy hai.orat or mard brabar kahny waly.orat ka negative pehlo.us ki burayna.us ki khamiyna sunanny or samny lany ki bardashat bhi rakhaiy.khalil sab ka point of view samghaiy.es dramaiy mai phir bhi negative orat k sath kharaiy hai.or us ka character bohat soft heart soft corner k sath dekha rahy hai.phir bhi hazam nhi ho raha.

  • Asslam-o-Alaikum
    Acha hua k yae akhri kist synimas myn dikhai jay taky sb dramy ky bich jb kam krna prta hai vo nhi krna pry ga 😅😅😅😅😅
    Mujhy yae drama psnd nhi tha lykin kise asy ko yae drama itna psnd hai mujhy bi majburn psnd krna praa or jb mujhy pta lga es myn hira manni or humaiyo saeed hyn i love her
    I am very very big fan of humaiyo saeed and hira manni’s eyes is very beautiful so ese liay mujhy hira psnd hai or khalil ur rehman ny to akhir hi kr di
    In k sb dramy bohot achy hyn pr yae to sb ko hi pichy chod gya
    Es ka sara cradit
    Humaiyo saeed
    Khalil ur rehman
    Or
    Rahat faty ali khan ko jata hai
    Es song ki wjha sy or humaiyo saeed ki acting ki wjha sy hi es dramy ko char chand lgy hyn
    I love this drama

  • I think every man or woman should take care of the religious norms. I don’t understand the concept that every woman should be considered innocent whatever right or wrong she does. If a woman is a culprit she has to pay for it sooner or later and same is the case with men. I don’t see anything wrong with this script ‘Mere Paas Tum Ho’ .

  • میرا چھوٹا بیٹا جس کی عمر ابھی رشتوں کو سمجھنے کے قابل نہیں تھی۔

    اس نے پوچھا پاپا ماما کیا کسی امیر آدمی کے ساتھ چلی جاۓگی۔

    اور ہم اکیلے رہے جائگے
    مجھے بہت شاک لگا اور میں نے پوچھا تم نے ایسا کیوں سوچا اور تم سے کس نے کہا۔

    اس نے کہا اسکول میں میرے دوست ہے اسکی ماما کسی کے ساتھ چلی گئی اس نے بتایا تھا اور بول رہا تھا پاپا سے روز پیسہ کے لئے لڑائی کرتی تھی۔

    پاپا ماما آپ سے بھی تو پیسوں کے لئے بہت لڑتی رہتی ہیں۔

    یہ اثر اس ڈرامہ کا اثر جو ہم اپنے بچوں بچیوں کو دیکھا رہے ہیں۔

    بنا شادی کے ایک عورت کسی دوسرے مرد کے گھر رہتی ہے اور اپنے شوہر کو اس بنیاد پر چھوڑ دیتی ہے کے اس کی ناجائز خواہشات کو پورا کرنے کے لئے مواقع نہیں تھے۔

    جو نہایت ایماندار اور شریف اور اپنی بیوی سے محبت کرنے والا شوہر ہے۔

    دراصل یہ کہانی ایک انگریز فلم انڈیسنٹ پرپوزل فلم کی ہے۔

    جس میں ایک عرب پتی کو ایک لڑکی سے محبت ہو جاتی ہی مگر وہ شادی شدہ تھی۔

    وہ اس کے ساتھ ایک رات گزارنے کے لئے اس کے شوہر کو لاکھو ڈالر کی آفر دیتا ہے۔

    دونوں میاں بیوی مان جاتے ہیں اور وہ اسکے ساتھ رات گزارتی ہے۔

    یہ کہانی بنیادی تو پر اس ہی سے لیکر بنائی گئی ہے پاکستانی معاشرے کو مدے نظر رکھتے ہوں اس میں طلاق جیسا مکرو عمل دیکھایا گیا ہے۔

    اس میں بھی وہ بنا شادی کے رہتی ہے۔

    بہت عرصہ تک اور وہ اس کو ایک مکان بھی لیکر دیتا ہے۔

    اور اس میں بھی میاں نے بارگینگ کی تھی اس امیر آدمی سے۔

    ایک رات گزارنے کے بعد ان دونوں کے درمیان تعلقات خراب ہوجاتے ہیں اور وہ دونو علیحدہ رہنے لگتے ہیں۔

    اور وہ اسی کے ساتھ رہنے لگتی ہے اس فلم میں وہ شخص لڑکی سے محبت کرتا ہے۔

    اس ڈرامہ میں مکار دیکھایا اور صرف عورت کو استعمال کرتا ہے۔

    ہمارے گھروں اور معاشرے میں کبھی نہیں ہوتا کے ہماری خواتین (بہن بیٹیاں) غربت کی وجہ سے اپنے شوہروں کو چھوڑ کر چلی جائے۔

    وہ تو روکھی سوکھی کھا کر بھی وفا کا راستہ کبھی نہیں چھوڑتی یہ کونسے معاشرے کی عکاسی ہے بھائی۔

    میں نے پاکستانی کچھ ڈرامہ دیکھیں ہیں۔

    زیادہ تر ڈرامہ پاکستانی معاشرے اور گھریلوں زندگیوں کو آپس کے رشتوں کو تباہ کر ہے ہیں

    یہ ڈرامہ نہں پاکستانی معاشرے کو برباد کرنے کی فیکٹریاں ہیں۔

    آج اس ڈرامہ کے پچھے جو لوگ دیونہ ہورہے ہیں۔
    آنے والے کل میں ایسا کوئی واقعات ان کے گھروں میں ہوگا۔

    تو کیا وہ تیار ہوگے اس بہن اور بیٹی کو سپورٹ کرنے کے لئے جس نے ایک ایماندار محبت اور کم آمدنی والے شوہر کو چھوڑ کر۔

    کسی امیر آدمی سے عشق لڑاتے ہوے اپنے شوہر سے طلاق کا مطالبہ کرے گی۔

    یی ایک مخصوص نظریا جس کو پرموٹ کیا جارہاہے بہت دھوم دھام سے الله تعالیٰ سب کو اپنی امان میں رکھیں آمین

  • Well before criticizing…. Wake up people dont be in denial are we so innocent as to believe such women dont exist in our society…. Or we just cant accept the truth. Whatever his views he has the right to express them that’s his freedom. We as a society need to learn how to face and accept the hard core truths.

  • Abolutely agree with Mr. Khalilul rehman
    As
    said prophet ﷺ‎مُحَمَّدُ

    میری امت ميں مردوں
    کے لۓ سب سے بڑا فتنہ

    عورتہے
    (مفہوم حديث)

  • >