Reviewit.pk

Zara Noor Abbas Talks About Aurat March

Zara Noor Abbas made an appearance in program ‘Har Lamha Purjosh’ where she shared her views on many things like Aurat March and how we all must respect differences.

Zara Noor Abbas Talks About Aurat March

The Chhalawa actress said, “Whether its Aurat March or Mard March it should be for humanity. There are no hard and fast rules and we should respect each other’s opinion and we should respect differences.”

Zara Noor Abbas Talks About Aurat March

“There are majority and minority and this country was formed so that we can live together.”

Zara Noor Abbas Talks About Aurat March

On asking upon whether she will attend Aurat March or not, she said she will surely join.

Zara Noor Abbas Talks About Aurat March

The Parey Hut Love actress shared her views about popular slogan from Aurat March and said, “I completely stand with that (Mera Jism Meri Marzi) slogan. This slogan has been misinterpreted and this slogan has a broad spectrum.”

Zara Noor Abbas Talks About Aurat March

Zara Noor Abbas believes that this slogan applies not only on women but to every human being. She also thinks that in our society many things are imposed on women and now women are raising their voice because they have been suppressed.

Safina

Safina Jatoi is a content creator and editor at Reviewit. She loves to explore latest themes related to Pakistani Showbiz and Latest Happenings.

  • اگر یہ واقعی ہمارا جسم ہوتا تو یقینن اس پہ ہماری مرضی چلتی۔ لیکن یہ زندگی ہم جس جسم کے ساتھ گزار رہے ہیں یہ اللہ کی امانت ہے تو اس پہ ہماری مرضی نہیں چل سکتی۔
    دوسرا یہ کہ اللہ نے اس جسم اور اور اس زندگی کے ہر ہر پہلو کے لئے جو احکامات دئے ہیں ان کے بعد ہماری
    مرضی کا کوئ دخل باقی نہیں رہتا۔
    باقی شیطان کو جب اللہ نے ڈھیل دے دی تو ہم اسکو تو نہیں روک سکتے مگر اپنی مرضی سے اسکو اپنی عقل پہ حاوی ہونے سے ضرور روک سکتے ہیں۔

    • Salam
      Excelent .I aggreed with you because every muslim believed why we are ashraf ulmakhlokat beacause we have a power given by God to protect from shetaan.Allah sub ko hadayt daey .

  • بات صرف اتنی ہے کہ یہ سب ھم سب کا اسلام سے دوری کا نتیجہ ہے، کیوں کہ ہمارے پیارے نبی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وسلم کے دور سے پہلے عورت بہت مظلوم تھی اور اسکو زندہ درگور کیا جاتا رہا، اور فر اب آپ لوگ دیکھیں یورپ کے طرف تو وہاں پر گرلفرینڈاور بوائے فرینڈ کی شکل میں زنا ہو رہے ہیں ۔ شادی کو مشکل ترین اور پریشان کن کام بنا دیا گیا ہے، لمحہ فکریہ۔،
    اب دونوں صورتوں میں معاشرے میں بگاڑ اور
    غیر متواز ن کی سی صورت بنی۔
    اور پھر اسطرح کے پلے کارڈز تو اسلامی جمہوریہ پاکستان کے لیے نہیں بلکہ غرمتوازن یورپی معاشرے کے لیے ذیادہ ضروری ہیں۔
    ہمارے کریم آقا حضرت محمد صلی اللہ علیہ واصحابہ وسلم نے عورت کو اعتدا ل کا معاشرے میں جو مقام،عزت اور مرتبہ دیا اسی کو جب یورپ کے لوگ پڑھتے اور سمجھتے تو متاثر ہو کو اسلام قبول کرتے ہیں۔
    لہٰذا ہم سبکو اپنی حدوں کی خوبصورتی کو سمجھنے کے لیے اپنے پیارے دین اسلام سے رجوع کے سخت ضرورت ھے۔
    اللہ عزو جل ہم سب کو کفار اور شیاطین ک شر سے اپنی پناہ میں رکھے ،امین۔

  • >