Khaas Episode 23 Story Review – So Far So Good

Opening Thoughts – Toxic Relationships:

Ohkay so, this was yet another episode of Khaas that did not disappoint. However, the last scene of this episode had me rolling my eyes but I will come to that later. The story is still intense & interesting. While watching this episode of Khaas, I once again found myself praising the writer for bringing such a subject to the table which hasn’t been spoken about in any of our dramas before. Yes, we have seen toxic relationships in our dramas a lot of times but to show a character like Ammar & then elaborate his personality traits in such a clean manner is praise-worthy. I really like Khaas for the fact that this drama focuses on such relationships or spouses who do not show any signs of dysfunction but the torture is purely mental & emotional, which no one actually understands or can relate to. This is the reason why it took Saba so long to explain what she has been through while being married to a man like Ammar!

So Far So Good:

Ammar thinks his life is finally settled, he has scored himself a trophy wife, his life is complete that is why he is out to focus on things which he should not be concerned with in the first place. Ammar actually has forgotten what Salma is putting him through & may be because Salma left, Ammar got the time to get distracted from his personal problems, that is why he felt entitled to poke his nose in Saba & Fakhir’s lives like it was his business. Ammar thinks he still has to prove something to Saba & because he can’t even fathom the idea of seeing Saba & Fakhir happy together, he decided to disturb them once again. Even though Ammar has divorced Saba but he still thinks he owns her or may be because he owned her in the past, she still belongs to him & that he gets to decide what she should & shouldn’t be doing in her life. Ammar will hate to see Saba getting married to a guy who Ammar deemed as a lowlife, someone he looked down upon, so for Saba to get married to him & give him the status that Ammar once had in the past is actually an insult to an egoistic man like him. This is the exact reason why Ammar not only spoke to Saba but also decided to speak to Faraz, the character that I find loathsome, even more than Ammar!

Saba continued to bear the brunt of her divorce, as if it wasn’t obvious with her family’s attitude that now she also got to hear them speak against her & blame her for everything. While watching Sadaf & Samreen having a conversation about Saba & her divorce made me feel that Saba didn’t need enemies in her life, because her family was perfectly doing the honors for her. Saba was once again forced to think about her past & feel helpless at the thought that her family still deemed her as the culprit & solely responsible for this divorce.

Salma’s mother can totally sense that Ammar is not the kind of guy who will do what it takes to keep Salma happy. She can see that Ammar is so full of himself that he doesn’t know how to entertain Salma & her ego. The scene where Salma called Ammar & he smirked was done so well, Ammar knew that he won & it showed how two egoistic people were now bound in a relationship & were trying hard to work things out. Salma’s mother has surely assessed Ammar rightly, that is why she has started to knock some sense into Salma because she can totally see Salma getting hurt & disappointed when Ammar will not meet her expectations or does what she says!

Fakhir proved to Saba that he was serious about her & that he was a man of his word. Fakhir knew it quite well that Faraz will not only mistreat him but his aunt as well, still he decided to meet him in a hope that he will be able to convince Saba’s father. That entire scene seemed like a bad editing job where the three actors were shot separately & then their dialogues were combined to make it look like a one scene. Anyways, later Faraz felt a little uneasy after he misbehaved with Fakhir & his aunt, he could totally feel that Fakhir was not mucking around. Fakhir & Saba’s conversations were nicely done. Fakhir has let Saba know the kind of life partner he will be for Saba. Also, I am glad even if it is still in a theory but they have repeatedly shown Saba talking about finding a job. Saba knows her potential & even before she got married to Ammar, she dreamt of doing a job for herself, so even after going through so much, Saba hasn’t given up on her dream. Yes, the memories attached to the idea of her job are bitter but with Fakhir’s emotional support, she will be able to forget all of that & focus on her career.

Anum’s role in this entire situation was not only unexpected but perfect too. To be honest, all this while I had completely forgotten about Anum & the fact that she could vouch for Fakhir but she finally did. To be honest, I am still not sure why Javeria hasn’t shown up at Saba’s place to explain everything to her parents? What is she waiting for? As much as I like Javeria when she puts Ammar in his right place & continues to give him all sorts of reality checks, I am not quite understanding why she is stalling & not meeting Saba’s parents? After Javeria found out that Fakhir had proposed, she should’ve hurried to see Saba’s family so that she can help Fakhir get his message across & tell Faraz about the kind of person Ammar actually is. I am glad that with Anum coming back in the picture, Fakhir’s side of the story was made clear but I wish someone does tell Faraz about the kind of manipulative liar Ammar actually is.

Closing Thoughts – Ping Pong Ball:

This episode of Khaas was once again Khaas. So far I haven’t had any complaints with this drama but I will say the last scene did leave me a little disappointed, only because I felt Faraz got away too easily. I swear the tough time that he gave Saba & the hell he put his daughter through, I wanted to see him getting humiliated by Ammar to come back to his senses. To be honest, as much as Anum’s explanation was apt, I did feel it wasn’t sooooo convincing to change rigid & stubborn Faraz’s perspective just so quickly. I know that Faraz was embarrassed & ashamed that he was about to get Saba married to the wrong person but still, it didn’t seem too convincing that the moment Anum came, Faraz immediately believed her. I think they should’ve also shown Javeria & Anum talking to Faraz back to back & both their testimonies opening his eyes properly because the way he behaved made him look immature.

Oh yes, I remember at that moment, when I saw Faraz changing his attitude & mindset quickly, I called Faraz a ping pong ball & now looking back at the way he has behaved over the last few episodes & this one in particular, he sure is a ping pong ball who fluctuates & bounces around a bit too quickly. Ping pong balls also do not have a brain of their own, they just follow the hit they get so yes, Faraz is a ping pong ball. I mean I find it amusing that he believes anything that anyone says without putting much thought to it. Faraz hated Saba because he believed Ammar, he also chose to oppose Fakhir’s proposal because Ammar said so, didn’t bother believing all the things that Saba had said & now all of a sudden, Anum came & he believed her without wasting a second? What a ping pong ball! Anyways, I am glad that Saba finally got a chance to explain her position to Faraz but still I so don’t want them to end the drama without Faraz & Sadaf ever knowing what Ammar used to say about them or the kind of person he actually is.

Kanwal was disappointed at the fact that both the daughters in law that she got were not ideal, I thought why she hasn’t ever wondered that her own son could be the culprit? I am glad that Farah has finally started speaking in favor of Saba, not once but repeatedly. I think Farah will make sure to convince everyone that Saba actually was nice & it was Ammar who did not cherish her or treat her the way she deserved to be treated. Please share your thoughts about this episode of Khaas.

Keep Supporting,
Cheers,
Zahra Mirza.

Zahra Mirza

Zahra Mirza got associated with Reviewit.pk in 2012. After moving to Australia, Pakistani content was a way of staying connected to the roots, language & Pakistani culture because it felt home. Eight years ago, review writing began as a hobby but has now turned into a passion.

  • Good episode, but felt it was a bit slow! I don’t know whom I detest more, saba’s Mother or father!!!! Why do they show such mother’s onscreen?? She not once comforted her daughter, nor did she tried to speak to her!! And isn’t Saba’s sister pregnant since Saba was married to Ammar? As I remember in one of the episodes, her sister complaining to Saba on phone about how her MIL is making her work in such condition and It was when Ammar was buying her new car and Saba has completed Hiddat and still she is pregnant

  • Overall the drama is good so I won’t complain. but really? Was Anum’s testimony so strong that it changed the parents’ mind. I agree they should have shown Javeria tell them how Ammar dragged Saba out of the office. how Salma used to visit the office even before they were married. even if she was scared of her job she just had to convince Saba’s parents. Ammar didn’t have to know. there are a lot of glitches in the drama. but it is successful in conveying the core message. and there is no overacting. i thought Sonia had been married not just engaged. anyways waiting for this drama to end. ideally i would have wanted to see Saba working without having to get married.

  • “Dramai mai drama kaisai banta hai ” is episode ka last scene bus dhaik lo ..
    “Beta mujhai maaf kardo ”
    I mean what the daish …..??
    Anam aa gaye , sab nano seconds mai explain hogaya , maafi mel gaye ..aur phir sab hansi khushi zindagi basar karnai lagai ..kahaani khatam aur ham so gayai ..???
    Is dramai mai kaye kaye loop holes hain ..but ammar ka character bht sahi se lekh gaya hai …
    Javeria ,wo norway waali ,farah in sab ko dramai mai daalnai ki zaroorat ?? Taakai larkiyo mai ammar wahid “chashm o chiraagh ” lagai ..

    Like ur review ..and the ping pong ball ..

  • یہ کیا بات ہوئی ؟ اتنی جلدی فراز مان”
    گیا۔ مزہ نھیں آیا”۔ یہ بات فیملی نے کی۔ جو یہ ڈرامہ بڑے شوق سے دیکھتے ھیں۔اور اس کو خاص اھمیت دیتے ھیں۔ واقعی اس ڈرامے میں کرداروں کی تشکیل اور کھانی کے خوبصورت اتار چڑھائو نےاس ڈرامے کو واقعی خاص بنادیا ھے ۔۔۔
    مزید آ پ کا خوبصورت تجزیہ اس ڈرامے کے لطف کو دو بالا کر دیتا ہے۔۔۔

  • I think Amaar would land up at Fakhir house without knowing that Sabha’s parents are already there. And he would show his true colours and get exposed.

    I didn’t like the way they redeemed Farz and Sadaf at the drop of a hat.
    I didn’t like Anum doing it for Sabha.
    I wanted them to realize it in some other way.
    Salma was in pensive mode today, hopefully she will resume her killer mode in the next episode. Let see when Soniya returns. I feel she would be the one to expose Amaar’s lie about Sabha’s affair to Amaar’s parents. I would love to see Soniya attending Sabha and Fakhir’s wedding.

  • I would like to share something for u all commentators ..
    *
    #nice #masge

    میں تو کسی مولانا سے شادی کرونگی*

    * یونیورسٹی سے تعلیم یافتہ ایم ایس سی لڑکی کا
    اپنی والدہ کو جواب *

    ” اسکی مت ماری گئی ہے ۔ اسی لیے اسے ایم ایس سی کرائی تھی کہ یہ اس قسم کی بات کرےگی ” خیرالنساء کا غصہ بھڑکا ہوا تھا ۔
    ” لڑکی کے والد نے اپنی بیگم سے یہ الفاظ سن کر کہا تعجب تو مجھے بھی ہورہا ہے ، دنیا کی تلخ حقیقتوں سے ناواقف یہ نادان لڑکی ، آخر کسی مولوی کے ساتھ دشواریوں کو کس طرح جھیل پائے گی ”
    باپ امین الحسن کے چہرے پر فکر کی گہری لکیریں پھیلتی جارہی تھیں ۔
    سنیے سونو کے ابو، میں تو سمجھا کر تھک چکی ہوں ، الٹا مجھے سمجھانے لگ جاتی ہے ، اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی صحابیات ک حوالے پیش کرنے لگتی ہے ، ایسے میں بھلا اس سے کیا کوئی معقول بات کی جاسکتی ہے ؟ آپ ہی اسے سمجھائیے ۔
    خیرالنساء ، تو گھبرا مت ، میں اسے سمجھاتا ہوں ۔ وہ میری بیٹی ہے ، تعلیم یافتہ ہے ۔ سمجھ جائے گی ۔
    خیرالنساء اور امین الحسن بستر پر دراز ہوگئے اور دونوں اسی فکر میں غرق تھے کہ آخر ان کی بیٹی عاتکہ کو کیا ہوگیا ھے ۔
    عاتکہ کیلئے انجینئر لڑکے کا رشتہ آیا تھا ، وہ خلیج میں کسی بین الاقوامی کمپنی میں ملازمت کرتا تھا ، اس کے پاس فیملی ویزا بھی تھا ، تنخواہ بہت اچھی تھی اور معروف خاندان سے تعلق رکھتا تھا ۔ خاندان کے ہر فرد کو رشتہ پسند تھا ، امین الحسن تو اس رشتے سے زیادہ ہی خوش تھے ۔ اور یہ کہتے نہ تھکتے تھے کہ خیرو، تیری بیٹی انجینئر کیساتھ شادی کے بعد راج کرے گی راج ، لڑکے کے پا س فیملی ویزا ہے ، ارے ادھر اس کا نکاح ہوا اور ادھر اڑ جائے گی تیری عاتکہ ، شہر میں اعلی شان کوٹھی میں رہتی ھے اسکی فیملی ، اسے کمپنی کی طرف سے بہترین گاڑی ملی ہوئی ہے ، اس کے نیچے کتنے سو ملازم کام کرتے ہیں ۔ خوش قسمت ہے تیری عاتکہ دیکھ ماشاءاللہ کیا رشتہ آیا ہے ۔ تصویر دیکھی ہے تو نے لڑکے کی ؟ ارے پرنس لگتا ہے ماشاءاللہ ۔ عرب شہزادے سے کم نہیں ۔
    خیرالنساء بھی ہاں میں ہاں ملا رہی تھی ، اس کی خوشیاں اس کی نگاہوں کی چمک سے ہویدا تھیں ، ماں کی خوشی کا تو یہ عالم تھا کہ وہ ٹھیک سے الفاظ تک ادا نہیں کرپا رہی تھی ۔ امین الحسن سے کہ رہی تھی : بس جی ، اب اللہ کے لیے جلدی جلدی تیاری شروع کردیجیے اور اللہ سے دعا کیجیے کہ رشتے کو کسی کی بری نظر نہ لگے ۔میں نے تو اس لڑکے کی تصویر عاتکہ کے کمرے میں رکھ دی ہے ، کسی وقت دیکھ ہی لے گی ۔ بہت خوش نصیب ہے ہماری شہزادی !!
    دوسرے دن ماں نے اس سے اس تصویر کے بارے میں پوچھا تھا اور اس کے جواب سے حیرت ہی میں پڑگئی تھی ۔
    عاتکہ نے جواب دیا : امی ، مجھے لڑکے میں کوئی کمی نظر نہیں آتی سوائے اس کے کہ وہ عالم نہیں ھے” میں کسی عالم دین مفتی. مولانا لڑکے سے شادی کرنا چاہتی ہوں ۔
    خیرالنساء : یہ تو کیا بکواس کئے جارہی ہے ۔ تیرے ابو اس رشتے سے کتنے خوش ہیں ، تمہیں کچھ پتہ بھی ہے ۔ مولانا سے شادی کرے گی ؟؟ بے وقوف لڑکی ! تجھے کچھ پتہ بھی ھے ، کہ یہ لڑکا انجینئر ہے ، خلیج میں نوکری کرتا ہے ، لاکھوں مہینہ کماتا ہے ، کتنے سو ملازمین اس کے اندر کام کرتے ہیں ، فیملی ویزا ہے اس کے پاس ۔ اعلی شان کوٹھی میں رہتا ہے ، بہترین گاڑی ہے اسکے پاس ۔۔۔۔۔
    عاتکہ بولی : امی ، یہ سب ٹھیک ہے ، لیکن اس کے چہرے سے دینداری تو نہیں جھلک رہی ؟ مجھے دیندار لڑکا چاہیے ۔
    خیرالنساء : تیرا دماغ کھسک گیا ہے کیا ؟ یہ کیا دینداری دینداری کی رٹ لگا رکھی ہے ، اس کو چھوڑ کے تو چار ہزار پانچ ہزار والے کسی مولوی سے بندھنا چاہتی ہے۔ کیا کرے گا کوئی مولوی تیرے لیے ۔ پاگل کہیں کی ۔ کس نے تمہیں الٹا سیدھا سمجھا دیا ہے ؟
    ناعمہ : امی ، کسی نے کچھ نہیں سمجھایا ۔ میں کسی مولانا سے اس لیے شادی کرنا چاہتی ہوں کہ وہ اپنا حق بھی جانتا ہے اور بیوی کا بھی ۔ وہ حقوق مانگتا ہے تو حقوق ادا بھی کرتا ہے ۔ وہ امانتدار ہوتا ہے ، وہ بدنظر نہیں ہوتا ، وہ محبت صرف مجھ سے کرے گا اور روزی تو بہر حال لکھی ہوئی ہے وہ تو جتنی ملنی ہوگی مل کر رہے گی ۔
    خیرالنساء : تیرے باپ کو کتنا صدمہ ہوگا جب وہ یہ سب سنیں گے ۔ کیسا اچھا بھلا رشتہ آیا تھا ، ارے ایسے رشتے اب ملتے کہاں ہیں ۔بے وقوف لڑکی کہیں کی ۔۔۔۔۔
    عاتکہ : امی ، یہ اچھا رشتہ کتنی رقم کے جہیز کے بدلے میں طے ہوگا ؟ لاکھوں کمانے والا کتنے لاکھ کی مانگ کرے گا ، یہ بھی معلوم ہے نا ؟
    خیرالنساء : یہ تیرا مسئلہ ہے یا تیرے والدین کا مسئلہ ہے ؟ شادی میں تو آج کے زمانے میں پیسے خرچ ہوتے ہی ہیں ۔ اس میں ایسی کون سی نئی بات ہے ؟ تو زيادہ دلیلیں مت بگھار سمجھی ۔
    عاتکہ : امی ، آج کے زمانے میں بھی اچھے علماء بغیر کچھ جہیز لیے اور بغیر کسی ڈیمانڈ کے لڑکیوں سے سنت کے مطابق شادی کرتے ہیں ۔ سنت کے مطابق شادی میں بہت برکت ہوتی ہے ۔ میرے لیے آپ لوگ کوئی مولانا لڑکا تلاش کیجیے ۔سوچیے نا ، یہ دنیا کتنے دنوں کی ہے ۔ آج نہ کل سب کو مرجانا ہے ، میں کسی خداترس انسان کے ساتھ جینا چاہتی ہوں تاکہ میری دنیا کیساتھ میری آخرت بھی تباہ نہ ہو جو ہمیشہ کی زندگی ہے ۔
    امین الحسن نے صبح ناشتے کے بعد جب عاتکہ کو آواز دی تو عاتکہ نے پہلے سے ہی اپنا ذہن بنالیا کہ اسے کس طرح باپ کو قائل کرنا ہے ۔
    امین الحسن : بیٹا ، ہم لوگوں نے آپ کے لیے ایک رشتہ دیکھا ہے ، ہم سب لوگوں کو لڑکا پسند ہے ، آپ کی امی بتا رہی تھیں کہ آپ اسے مسترد کر رھی ہیں
    عاتکہ : ابو ، مجھے کوئی اعتراض نہیں ہے لیکن اگر آپ میری خوشی چاہتے ہیں تو میرے لیے کوئی دیندار عالم دین لڑکا دیکھیے ۔ میں جانتی ہوں کہ یہ سن کر آپ کو اچھا نہ لگے گا لیکن میں آپ سے پھر بھی یہی گزارش کروں گی ۔
    امین الحسن : لیکن بیٹا ، مولوی لوگوں میں بھی تو برے لوگ ہوتے ہيں ؟ اگر کوئی ناہنجار مولوی مل گیا تو ؟ نہ دنیا ملی اور نہ آخرت ۔ خسارہ ہی خسارہ ۔۔ہم آپ کا برا تو نہیں چاہ سکتے ہیں نا بیٹا !
    عاتکہ : آپ صحیح کہ رہے ہیں ابو ، لیکن ہر جگہ شرح دیکھی جاتی ہے ۔ ہو سکتا ہے کہ کچھ مولوی برے ہوں لیکن زياد ہ تر تو اچھے ہوتے ہیں اور اپنی فیملیوں کو بہت خوش بھی رکھتے ہیں کیونکہ وہ یہ حدیث جانتے ہیں جس میں ھمارے پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم نے مردوں کو خطاب کرتے ھوے فرمایا تھا کہ تم میں سے بہتر وہ مرد ھے جو اپنے اہل خانہ کے ساتھ بہتر ھے پھر کیا ضروری ہے کہ میری قسمت میں کوئی برا ہی ہو ۔ آپ اللہ پر بھروسہ تو کیجیے ۔ میری دنیا بنانے کے چکر میں میری آخرت تو کسی بے دین کے حوالے مت کیجیے ۔
    امین الحسن لاجواب ہوگئے تھے ۔ انہیں اپنی بیٹی کی بات میں جان نظر آرہی تھی ، وہ کوئی کم سن اور گنوار لڑکی بھی نہیں تھی ۔ اعلا تعلیم سے بہرہ ور تھی ، تئیس سال کی عمر کو پہنچ چکی تھی ۔ وہ اپنی پسند اور ناپسند کا اظہار کرسکتی تھی لیکن انہیں سماج اور خاندان کے لوگوں کا طعنہ ستا رہا تھا ۔ وہ جانتے تھے کہ لوگ مذاق اڑائیں گے ، باتیں بنائیں گے اور انہیں سب کی باتیں سننی پڑیں گیں ۔
    خیرالنساء کو انہوں نے اب خود ہی قائل کرنا شروع کردیا اور اس تلاش و جستجو میں لگ گئے کہ کوئی اچھا عالم ملے تو اپنی بیٹی کی شادی کردیں ۔ اللہ کا کرنا دیکھیے کہ انہیں دنوں شہر میں ایک بژا دینی جلسہ ہورہا تھا ۔ اور اپنے ھی شہر کا ایک نوجوان عالم دین قرآن وسنت کے دلائل کی روشنی میں بڑے جامع انداز اور زبردست لفاظی میں تقر کررہا تھا ۔ امین الحسن کی آنکھوں میں امید کی روشنی جھلملانے لگی ۔
    امین الحسن نے نوجوان مفتی سے اس سلسلے میں رابطہ کیا نوجوان عالم نے جواب دیا کہ محترم آپ یہ تجویز لیکر میرے والدین کے پاس تشریف لیجائیں میری طرف سے اور میرے والدین کیطرف سے آپکو مایوسی کا سامنا نہیں کرنا پڑیگا ان شاءاللہ
    چھ مہینے کے اندر شادی ہوگئی ،نوجوان مفتی صاحب ایک مسجد میں خطابت کیساتھ دینی ادارہ میں تدریسی فريضہ بھی انجام دے رہے تھے ، وہی کوئی دس ہزار کی تنخوا ہ تھی ۔ شادی بڑے ہی سادہ انداز میں بغیر کسی رسم حنا اور خرافات کے ہوئی ۔ عاتکہ کو ایسا لگ رہا تھا جیسے اس کے پاؤں زمین پر ہوں ہی نہیں ویسے بھی نوجوان مفتی صاحب شیروانی میں بہت حسین لگ رہے تھے لیکن دوسری طرف خاندان کے لوگ مزے ضرور لے رہے تھے ۔ چچازاد بھائی امین الحسن سے کہ رہے تھے : چلیے امین صاحب ، پیسے بچانے کےلیے آپ نے اچھا قدم اٹھایا، دینداری کے پردے میں یہ حرکت آسانی سے چھپ جائے گی ۔ گاؤں کے مکھیا کا طنز تھا : مبارک ہو امین بابو ، پچیس تیس لاکھ کی بچت ہوگئی ویسے شادی کے بعد اسی پیسے سے مولانا کو کوئی بزنس کروادیجیے گا ۔۔۔۔
    دو مہینے بعد عاتکہ سسرال سے اپنے مائکے آئی تھی ، وہ ایسے خوش تھی جیسے اسے زندگی کا سب سے بڑا خزانہ ہاتھ لگ گیا ہو ، ماں کو اس بات کی خوشی تھی کہ بیٹی خوش ہے ، یہ الگ بات ہے کہ اس کے اندرون میں خلش اب بھی موجود تھی البتہ امین الحسن پوری طرح مطمئن تھے ۔ باپ بیٹی کے درمیان باتیں ہورہی تھیں تبھی عاتکہ کے فون کی گھنٹی بجی ۔ ادھر ا س کے شوہر تھے ۔ وہ موبائل فون لے کر کمرے میں چلی گئی ۔ کچھ دیر بعد جب وہ باہر آئی تو اس کا چہرہ کھل رہا تھا ، اس کی آنکھیں آنسوؤں سے تر تھیں اور وہ کہ رہی تھی : ابو ، وہ آپ کے داماد نے مدینہ منورہ کے ایک تحقیقی ادارے میں جاب کیلئے اپلائ کیا ھوا تھا، وہ جاب انکو مل گئ ہے ۔ ڈیڑھ لاکھ تنخواہ کے ساتھ رہائش فری دی جائے گی اور فیملی ویزا بھی ہے، ہم لوگ اگلے دو ماہ کے اندر ان شاءاللہ مدینہ منورہ میں ہوں گے ۔
    خیرالنساء اب امین الحسن کو دیکھ رہی تھی اور دونوں کے مارے خوشی کے آنکھوں میں آنسو تھے ۔۔۔
    لیکن امی یاد رکھیں دنیا مقصود نہیں ہے ۔۔جو اللہ سے ڈر کر حضورﷺ- کے بتائے ہوئے طریقے پر زندگی گزار تے ہیں دنیا انکے قدم چوم تی ہے اللہ تعالی کا فرمان ہے ومن یتق اللہ یجعلہ مخرجا ویرزقہ من حیث لا یحتسب ۔۔۔جو اللہ تعالی سے ڈر کر زندگی گزارے اللہ اسکے لئے راستہ نکالدیتے ہیں اور ایسے طریقے سے روزی دیتے ہیں جس کا اسکو گمان بھی نہیں ہوتا ۔۔۔
    مگر جو دنیا ہی کو اپنا نصب العین بنالے وہ آخرت کی نعمتوں سے محروم ہوتاہے اور دنیاوی زندگی بھی پریشان کن ہوتی ہے ۔
    ا
    مفتی محمد عمار حسن
    انٹر نیشنل اسلامک یونیورسٹی اسلام آباد

  • I really enjoyed the 35 minutes of the episode. It was happening episode. Yes i agree that faraz believed in anum too soon. Zahra did you notice that, direction is so detailed that, saba, sumreen, sadaf all have curly hair. And in 21st episode fakhir was drawing children amd an old woman and in 22nd episode they showed the drawing when he was talking to saba. I really like this detailing.

  • >